بوئنگ کے انجن میں خرابی کی وجہ کمزور دھات ہو سکتی ہے: این ٹی ایس بی

امریکہ میں حادثے کی تفتیش کرنے والے ادارے نے یونائیٹڈ ایئرلائنز کے بوئنگ 777 ہوائی جہاز کے انجن فیلئر کے حالیہ حادثے کی ایک ممکنہ وجہ کمزور دھات کو قرار دیا ہے۔

یہ مسافر جیٹ ہوائی جہاز، اپنا دایاں انجن دھماکے سے تباہ ہو جانے اور انجن کے پُرزے ایک رہائشی علاقے میں گرنے کے بعد ریاست کولوراڈو کے شہر ڈن وَر میں ہفتے کے روز ہنگامی طور پر اُترا تھا۔

نیشنل ٹرانسپورٹیشن سیفٹی بورڈ، این ٹی ایس بی حادثے کی وجوہات کی چھان بین کر رہا ہے۔ اس ہوائی جہاز کے انجن میں ڈن وَر ہوائی اڈے سے اُڑان بھرنے کے کچھ ہی دیر بعد خرابی پیدا ہو گئی تھی۔ ابتدائی تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ دو پنکھوں کی پنکھڑیاں ٹوٹ گئی تھیں جبکہ بقیہ پنکھڑیوں میں نقصان ظاہر ہوا ہے۔

این ٹی ایس بی کے ایک اعلیٰ عہدیدار نے پیر کے روز بتایا کہ یہ ممکن ہے کہ اُن پنکھڑیوں میں سے ایک کو دھاتی کمزوری کی وجہ سے نقصان پہنچا ہو۔

امریکہ کی وفاقی ہوابازی انتظامیہ نے حادثے کا شکار ہوئے ہوائی جہاز ہی کے انجن کی قِسم والے بوئنگ 777 ہوائی جہازوں کے ہنگامی معائنے کا حکم جاری کیا ہے۔

اس انتظامیہ نے کہا ہے کہ یونائیٹڈ ایئرلائنز واحد امریکی فضائی کمپنی ہے جس کے بیڑے میں اس قِسم کے انجن ہیں۔ اُس کا مزید یہ بھی کہنا تھا کہ جو دیگر فضائی کمپنیاں اِسی نمونے کے انجن والے بوئنگ 777s استعمال کر رہی ہیں وہ جاپان اور جنوبی کوریا میں ہیں۔

جاپان کی وزارتِ ٹرانسپورٹ نے دو بڑی جاپانی فضائی کمپنیوں، آل نپّون ایئرویز اور جاپان ایئرلائنز کو مذکورہ قِسم کے انجن والے بوئنگ 777s ہوائی جہازوں کی پروازیں معطل کرنے کا حکم دے دیا ہے۔