میانمار کی فوج کی سرکاری ملازمین سے کام پر واپس لوٹنے کی درخواست

rمیانمار کی فوج کے رہنما نے اقتدار پر فوج کے قبضے کے خلاف پھیلتی ہوئی تحریک میں شامل سرکاری ملازمین سے کام پر لوٹنے کی درخواست کی ہے۔

سینئر جنرل مِن آنگ ہلائن نے جمعرات کے روز ٹیلی ویژن پر خطاب کیا۔ اس سے قبل کئی پولیس اہلکاروں اور سرکاری ملازمین نے اپنی ملازمتوں پر لوٹنے سے انکار کر دیا تھا۔

جناب مِن آنگ ہلائن نے کہا کہ بعض ’’بد دیانت‘‘ افراد کے اکسانے پر چند سرکاری ملازمین اپنے فرائض کی ادائیگی سے کنارہ کشی اختیار کیے ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایسے افراد سے درخواست کی جاتی ہے کہ وہ اپنے جذبات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ملک اور عوام کے مفادات کی خاطر فوراً ملازمتوں پر واپس لوٹ آئیں۔

پہلی فروری کو فوج کی جانب سے حکومت کا تختہ الٹنے کے خلاف بڑے احتجاجی مظاہرے مسلسل چھٹے روز جمعرات کو بھی جاری رہے۔ ملک کے سب سے بڑے شہر یانگون کے ساتھ ساتھ دارالحکومت نیپیدو اور دیگر مقامات پر بھی مظاہرے منعقد کیے گئے ہیں۔