ٹوکیو اور اوساکا کے علاقوں میں فی الحال ہنگامی حالت برقرار رہنے کا امکان

جاپانی حکومت، کورونا وائرس انفیکشن کی صورت حال اور گورنروں کی آراء کے تناظر میں یہ نتیجہ اخذ کر رہی ہے کہ فی الحال ٹوکیو بلدیاتی علاقے اور کانسائی خطے میں ہنگامی حالت کا خاتمہ مشکل ہو گا۔

ہنگامی حالت ابتدائی طور پر گزشتہ اتوار کو ختم ہونے والی تھی تاہم ٹوکیو، اوساکا اور آٹھ دیگر پریفیکچروں میں اسے مزید ایک ماہ کے لیے توسیع دے دی گئی تھی۔

حکومت، جمعہ کے روز ماہرین کی رائے جاننے کے بعد، اپنے بنیادی ردعمل پلان میں، ترمیم شدہ خصوصی کورونا وائرس اقدامات کے قانون کی روشنی میں چند تبدیلیاں کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ ان ترمیم شدہ قوانین کا اطلاق ہفتے کے روز سے ہو رہا ہے۔

حکومت اس بات پر بھی غور کر رہی ہے کہ آیا وہ چند خطوں میں ہنگامی حالت ختم کر سکتی ہے۔

ٹوکیو کی گورنر کوئیکے یُوریکو نے کہا ہے کہ حالات، ہنگامی حالت ختم کرنے کی اجازت نہیں دیتے۔

اُدھر اوساکا کے گورنر یوشی مُورا ہیروفُومی عندیہ دے چکے ہیں کہ انکا پریفیکچر آئندہ ہفتے طے کرے گا کہ آیا حکومت سے ہنگامی حالت ختم کرنے کی درخواست کی جائے۔

مرکزی حکومت کے اندر بعض کی رائے ہے کہ آئیچی، گیفو اور فُوکُواوکا پریفیکچروں میں ہنگامی حالت کے خاتمے پر غور ممکن ہے کیونکہ وہاں، نئے متاثرین کی تعداد بتدریج کم ہو رہی ہے۔

تاہم دیگر کا کہنا ہے کہ طبی نظاموں پر دباؤ کا بغور جائزہ لینے کے بعد ہی انتہائی احتیاط سے فیصلہ کیا جانا چاہیے۔