آسٹرازینیکا ویکسین سے متعلق مزید ڈیٹا کی ضرورت ہے: عالمی ادارۂ صحت

عالمی ادارۂ صحت نے کہا ہے کہ سب سے پہلے جنوبی افریقہ میں مصدقہ طور پر پائی گئی کورونا وائرس کی ایک متغیر شکل کے خلاف آسٹرازینیکا کورونا وائرس ویکسین کی افادیت کا تعین کرنے کیلئے اُسے مزید ڈیٹا حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔

جنوبی افریقہ کی حکومت نے اتوار کے روز کہا ہے کہ وہ برطانوی ادویات ساز کمپنی آسٹرازینیکا اور یونیورسٹی آف آکسفورڈ کی تیارکردہ ویکسین کے ٹیکے لگانا عارضی طور پر معطل کر دے گی۔

اُس نے ابتدائی طبی آزمائشی ڈیٹا کا حوالہ دیا ہے جس میں نشاندہی ہوئی ہے کہ یہ ویکسین، وائرس کی متغیر قِسم کے باعث ہونے والی معمولی یا معتدل بیماری کی روکتھام کرنے میں کم مؤثر ہو سکتی ہے۔

عالمی ادارۂ صحت کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس ایڈہانم گیبریسس نے پیر کے روز ایک اخباری کانفرنس میں گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ واضح طور پر تشویش والی خبر ہے۔

اس عالمی ادارے کی سربراہ سائنسدان سومیا سوامی ناتھن کا کہنا تھا کہ ہمیں قطعی یہ نتیجہ اخذ کرنا شروع نہیں کر دینا چاہیے کہ یہ ویکسین بالکل کارآمد نہیں ہے۔ انہوں نے مزید ڈیٹا کا جائزہ لینے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔