’’یوم شمالی علاقہ جات‘‘ کے موقع پر وزیراعظم سُوگا کا پیغام

جاپان کے وزیراعظم سُوگا یوشی ہیدے نے کہا ہے کہ روس کے زیر انتظام چار جزائر جن پر جاپان ملکیتی دعویٰ رکھتا ہے، ان کے علاقائی معاملے کے حل کی خاطر وہ اس بارے میں اب تک ہونے والے معاہدوں کی بنیاد پر روس کے ساتھ مذاکرات جاری رکھیں گے۔

جناب سُوگا نے ان چار جزائر کی واپسی کے مطالبے کے لیے اتوار کو منعقد ہ سالانہ قومی ریلی کے موقع پر ایک وڈیو پیغام بھیجا تھا۔ جناب سُوگا نےکہا کہ یہ قابل افسوس ہے کہ معاملہ ابھی تک حل نہیں ہوا اور دوسری جنگ عظیم کے خاتمے کے 75 سال بعد بھی روس کے ساتھ امن معاہدہ طے نہیں پایا جا سکا۔

مذکورہ ریلی’’یوم شمالی علاقہ جات‘‘ کے موقع پر منعقد ہوئی۔ سات فروری سنہ 1855 میں جاپان اور روس کے درمیان معاہدے پر دستخط ہوئے تھے، جس کے تحت تسلیم کیا گیا تھا کہ یہ جزائر جاپان کے ہیں۔

چار جزائر پر مشتمل یہ شمالی علاقہ جات روس کے زیر انتظام ہیں۔ جاپان ان پر ملکیتی دعویٰ رکھتا ہے۔ جاپانی حکومت کا کہنا ہے کہ دوسری جنگ عظیم کے بعد ان جزائر پر غیر قانونی قبضہ کیا گیا۔

جناب سُوگا نے اپنے پیغام میں کہا کہ انہوں نے ستمبر میں وزیراعظم کا منصب سنبھالنے کے بعد روسی صدر ولادیمیر پُوٹن سے ٹیلی فون پر مذاکرات کے دوران اتفاق کیا تھا کہ انہیں امن معاہدے پر دستخط سمیت معاملات پر بات چیت کو جاری رکھنا چاہیے۔

جناب سُوگا نے کہا کہ اپنے پیشرو وزیر اعظم آبے شنزو سے ان کی حکومت کو وہ امور وراثت میں ملے ہیں جن پر سنگاپور میں سنہ 2018 میں انہوں نے صدر پوٹن کے ساتھ تبادلہ خیال کیا تھا۔

جناب سُوگا نے مزید کہا کہ وہ تبادلہ پروگراموں کی جلد بحالی کی جانب کام کرتے رہیں گے، جن میں جزائر کے سابق رہائشیوں اور ان کے اہلخانہ کی اپنے آباؤاجداد کی قبروں پر حاضری کے لئے ویزوں کے بغیر دورے بھی شامل ہیں۔ یہ دورے کورونا وائرس کی عالمی وباء کے باعث معطل کر دیے گئے تھے۔