جوہری بجلی گھر سے مسخ شدہ ایندھن کے یونٹس نکالنے کا کام شروع

مارچ 2011 میں آنے والے زلزلے اور تسونامی سے متاثرہ فوکوشیما دائی اچی جوہری بجلی گھر کی منتظم کمپنی کے مطابق تین نمبر ری ایکٹر کی عمارت کے سٹوریج پول سے مسخ شدہ جوہری ایندھن کی چار اسمبلیوں کو نکالنے کا کام شروع کر دیا گیا ہے۔ یہ کام جوہری بجلی گھر کو ناکارہ بنانے کے عمل کا حصہ ہے۔

ٹوکیو الیکٹرک پاور کمپنی، ٹیپکو، نے توشیبا انرجی سسٹمز اینڈ سولیوشنز کارپوریشن کے ساتھ مشترکہ طور پر بنائے گئے آلات استعمال کرتے ہوئے رواں ہفتے اس عمل کا آغاز کیا ہے۔

اس عمل میں استعمال کی جانے والی مشین میں ان یونٹس کو اٹھانے کے لیے خصوصی طور پر تیار کردہ کُنڈا نصب کیا گیا ہے۔ ہائیڈروجن کا دھماکہ ہونے کے نتیجے میں عمارت کا ملبہ گرنے سے ان یونٹس کے ہینڈلوں کو شدید نقصان پہنچا تھا اور وہ مسخ ہو گئے تھے۔

ٹیپکو نے 2019 میں ان چار اسمبلیوں سمیت غیر استعمال شدہ اور استعمال شدہ ایندھن کی تمام 566 سلاخوں کو ری ایکٹر کے پول سے نکال کر بجلی گھر کے احاطے میں ایک محفوظ مقام پر منتقل کرنے کے کام کا آغاز کیا تھا۔ کمپنی یہ کام آئندہ ماہ تک مکمل کرنے کا منصوبہ رکھتی ہے۔