ایل ای ڈی تیار کرنے والوں کے لیے ملکہ الزبتھ انعام

لائٹ ایمیٹنگ ڈائیوڈ یا ’ایل ای ڈی‘ کی ابتدائی ٹیکنالوجی تیار کرنے والے 5 افراد کو رواں سال کے ملکہ الزبتھ انعام برائے انجینئرنگ کے لیے منتخب کیا گیا ہے۔ دو سال میں ایک بار دیے جانے والے اس برطانوی انعام کا اعلان منگل کے روز آن لائن کیا گیا۔

یہ اعزاز حاصل کرنے والے 5 افراد میں، 3 امریکی سائنسدانوں کے ساتھ میجو یونیورسٹی کے پروفیسر اَکاساکی اِسامُو اور جاپان میں پیدا ہونے والے امریکی شہر سانتا باربرا میں واقع یونیورسٹی آف کیلیفورنیا کے پروفیسر ناکامُورا شُوجی شامل ہیں۔ تین امریکی سائنسدانوں میں نِک ہولونیاک جونیئر بھی شامل ہیں جنہوں نے پہلی سرخ ایل ای ڈی بنائی تھی۔

انعام دینے والے ججوں نے کہا کہ ایل ای ڈی کی ایجاد سے توانائی کی بچت والی روشنیوں کی بڑے پیمانے پر تیاری میں کامیابی ہوئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایل ای ڈی کا کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج میں کمی میں کلیدی کردار ہے اور ان سے روشنیوں کے شعبے میں ماحول دوست انقلاب لانے میں مدد ملی ہے۔