چین میں جعلی کورونا ویکسین ضبط

چین کی پولیس نے بتایا ہے کہ اس نے جعلی کورونا وائرس ویکسین تیار اور فروخت کرنے کے شبے میں، 80 سے زائد افراد کو گرفتار کیا ہے۔

سرکاری خبر رساں ادارے شِنہوا کے مطابق، پولیس نے بیجنگ اور اس کے علاوہ جیانگسُو اور شاندونگ صوبوں میں، تیاری کے مراکز پر چھاپہ مار کے جعلی ویکسین کی تقریباً 3 ہزار خوراکیں ضبط کر لیں۔

بتایا جاتا ہے کہ مشتبہ افراد ستمبر سے نمکین پانی استعمال کر کے جعلی ویکسین تیار کر رہے تھے اور اسے بھاری قیمت پر فروخت کر رہے تھے۔

چینی کمیونسٹ پارٹی سے منسلک ایک انگریزی اخبار ’دی گلوبل ٹائمز‘ نے ذرائع کے حوالے سے اس بات کا امکان ظاہر کیا کہ مشتبہ افراد جعلی ویکسین کو ملک سے باہر لے جانے کی کوشش کر رہے تھے۔

وزارت خارجہ کے ترجمان وانگ وین بِن نے منگل کے روز ایک نیوز کانفرنس میں بتایا کہ حکومت ویکسین کے محفوظ ہونے کو نہایت سنجیدگی سے لیتی ہے اور جعلی ویکسین کی تیاری و فروخت کی پکڑ دھکڑ جاری رکھے گی۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ چین، جعلی ویکسین کی تقسیم کی روک تھام کے لیے دنیا بھر کے قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ مل کر کام کرے گا۔

چین، اپنی ملکی ساختہ ویکسین زیادہ تر ترقی پذیر ممالک کو فراہم کر رہا ہے۔ حکومت جعلی مصنوعات کی پکڑ دھکڑ کو اس لیے بھی اجاگر کر رہی ہے کہ اس کی ویکسین لینے والے ممالک میں اس کا اعتماد قائم رہے۔