پاکستان میں صحافی کے قتل کے ملزم کو سپریم کورٹ نے رہا کرنے کا حکم دے دیا

پاکستان کی سپریم کورٹ نے 2002 میں ایک امریکی صحافی ڈینیئل پرل کے قتل میں پہلے مجرم اور بعد ازاں بے گناہ قرار دیے جانے والے اسلامی انتہا پسند کو رہا کرنے کا حکم دیا ہے۔

وال اسٹریٹ جرنل کے نامہ نگار جناب پرل کو کراچی میں اسلامی انتہا پسندوں کے خلاف چھان بین کے دوران اغوا کرنے کے بعد قتل کر دیا گیا تھا۔

مرکزی ملزم احمد عمر سعید شیخ کو شروع میں سزائے موت سنائی گئی تھی، مگر ایک اعلیٰ عدالت نے گزشتہ سال انہیں بری کر دیا تھا۔ صحافی پرل کے والدین نے ان کی سزائے موت برقرار رکھنے کے لیے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔ عدالت نے ان کی اپیل جمعرات کے روز خارج کر دی اور اس قتل میں ملوث تین دیگر ساتھیوں سمیت مرکزی ملزم کو رہا کرنے کا حکم جاری کیا۔

صحافی پرل کے خاندان نے اپنے وکیل کے ذریعے ایک بیان میں کہا ہے، ’’ان قاتلوں کی رہائی سے دنیا کے کسی بھی علاقے کے صحافیوں اور پاکستان کی عوام کو خطرے میں ڈال دیا گیا ہے‘‘۔