امن سربراہی اجلاس، جاپانی وزیرِ اعظم کا یوکرین کی حمایت جاری رکھنے کا عزم کیا

جاپان کے وزیرِ اعظم کِشیدا فُومیو نے سوئٹزرلینڈ میں ہونے والی ایک بین الاقوامی کانفرنس میں یوکرین میں امن لانے کے اپنے عزم کا اظہار کیا ہے۔

عالمی رہنماء یوکرین کی طرف سے پیش کردہ امن منصوبے پر تبادلہؑ خیال کرنے کی غرض سے سوئٹزرلینڈ میں جمع ہوئے۔

کِشیدا نے کہا کہ دو سال قبل حملے کے آغاز کے بعد سے جاپان نے روس پر سخت پابندیاں عائد کیں اور یوکرین کو بھرپور مدد فراہم کی ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ یہ حمایت بحران کے اس احساس سے کی جا رہی ہے کہ جو کچھ وہاں ہو رہا ہے وہ کل مشرقی ایشیاء میں بھی ہو سکتا ہے۔

جاپانی وزیرِ اعظم نے کہا کہ اُنہوں نے اور یوکرین کے صدر وولودیمیر زیلنسکی نے اٹلی میں گروپ آف سیون سربراہ اجلاس کے موقع پر منعقدہ بات چیت کے دوران امداد کے ایک نئے معاہدے پر دستخط کیے۔

کِشیدا نے مزید کہا کہ یوکرین میں پائیدار امن کو عملی جامہ پہنانا دنیا کو تقسیم یا تصادم کے بجائے ہم آہنگی کی طرف لے جانے کے حوالے سے علامتی ہو گا۔

اُن کا کہنا تھا کہ خوبصورت یوکرینی سرزمین کے لیے امن کی بحالی کی غرض سے جاپان عالمی برادری کے ساتھ قریبی تعاون کے ذریعے اپنی کوششیں جاری رکھے گا۔

کِشیدا نے کہا کہ جاپان خصوصاً جوہری توانائی کے تحفظ کو یقینی بنانے میں مثبت کردار ادا کرے گا، اور بارودی سرنگوں کو ہٹانے، بجلی کی فراہمی اور دیگر شعبوں میں مدد جاری رکھے گا۔ اُنہوں نے متعلقہ ممالک پر زور دیا کہ مل کر کام کریں۔