نوتو زلزلہ رپورٹ میں آفات سے نمٹنے کیلیے ہائی ٹیک ڈرونز کے استعمال کا مطالبہ

جاپانی حکومت کی ایک رپورٹ میں آفات سے نمٹنے کے لیے ڈرونز اور دیگر جدید ٹیکنالوجیز کے استعمال پر زور دیا گیا ہے۔

ایک سرکاری ٹاسک فورس کی پیر کو جاری ہونے والی رپورٹ میں تجزیہ کیا گیا ہے کہ جزیرہ نما نوتو میں نئے سال کے پہلے دن آئے شدید زلزلے پر حکام نے کس طریقے سے ردعمل ظاہر کیا۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ نقصانات کا تخمینہ لگانے اور رسد کی ترسیل میں تاخیر ہوئی، اس کی ایک وجہ یہ تھی کہ زلزلہ غروبِ آفتاب سے کچھ دیر پہلے آیا۔ اس میں کہا گیا ہے کہ جزیرہ نما پر سڑکیں بھی منقطع ہو گئی تھیں۔

رپورٹ میں آفات سے نمٹنے کا عمل بہتر بنانے کے اقدامات کی فہرست دی گئی ہے۔ ان میں متاثرہ علاقوں کے بارے میں چوبیس گھنٹے معلومات جمع کرنا اورسامان کی ترسیل کی صلاحیت کے حامل اعلیٰ کارکردگی والے ڈرونز کے استعمال سمیت جدید ترین ٹیکنالوجی کو استعمال کرنا شامل ہے۔ ان اقدامات میں سڑکوں کی مرمت کے لیے پیشگی طریقۂ کار طے کرنا بھی شامل ہے۔

رپورٹ میں نشاندہی کی گئی ہے کہ طویل عرصے تک نل کے پانی کی قلت نے ہنگامی پناہ گاہوں میں صفائی کی صورتحال کو متاثر کیا۔ اس میں ہنگامی کنوؤں، بیت الخلاؤں کی فراہمی یقینی بنانے کے منصوبے اور ٹریلر ہاؤسز کو تیزی سے پہنچانے کے نظام کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

وزیر اعظم کِشیدا فُومیو نے ٹاسک فورس کے پیر کے روزمنعقدہ اجلاس میں، ماہرین کے خیالات سننے اور مزید تجزیے کرنے کا ارادہ ظاہر کیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت آفات کے خلاف اقدامات کو تیز کرتے ہوئے زلزلے سے متاثرہ علاقوں کی تعمیرِ نو کے لیے ہر ممکن کوشش جاری رکھے گی۔

جناب کِشیدا نے یہ عندیہ بھی دیا کہ وہ زلزلے سے متاثرہ علاقوں کی مدد کے لیے حکومت کے محفوظ فنڈ کو پانچویں بار استعمال کرنے کے انتظامات کریں گے۔