چین میں برطانیہ کے لیے جاسوسی کے شبے میں چینی جوڑے سے تفتیش

چین کی قومی سلامتی کی وزارت کا کہنا ہے کہ وہ برطانیہ کے لیے جاسوسی کے شبے میں ایک سرکاری ایجنسی میں ایک چینی جوڑے سے تفتیش کر رہی ہے۔ یہ پیش رفت مبینہ جاسوسی کے حوالے سے دونوں ممالک کے درمیان الزامات کے تبادلے کے سلسلے میں تازہ ترین ہے۔

وزارت کے پیر کو کیے گئے انکشاف کے مطابق، جوڑے پر شبہ ہے کہ وہ برطانوی خفیہ انٹیلی جنس سروس MI6 کے تعاون سے چین میں جاسوسی کی سرگرمیاں انجام دے رہا تھا۔

وزارت کے بیان میں کہا گیا ہے کہ جب شوہر 2015 میں تعلیم حاصل کرنے برطانیہ گیا تو MI6 نے اس سے رابطہ کیا اور اسے چینی حکومت کی اندرونی معلومات اکٹھی کرنے کے لیے بھاری معاوضے کی پیشکش کی۔

وزارت نے یہ بھی کہا کہ MI6 نے اسے بار بار اہلیہ کا تعاون حاصل کرنے کا کہا اور معاوضہ دوگنا کرنے کا وعدہ کیا۔

وزارت نے اس بات پر زور دیا کہ اس نے ان اہم عناصر کا خاتمہ کر دیا ہے جو برطانیہ نے چین میں سرایت کر رکھے تھے۔

چینی وزارت نے اس سے قبل جنوری میں اعلان کیا تھا کہ اس نے ایک غیر ملکی شہری کو چین میں ایک مشاورتی کمپنی میں کام کے دوران MI6 کے تعاون سے جاسوسی کرتے ہوئے پایا تھا۔

برطانوی حکام نے بھی ان لوگوں کے خلاف الزامات میں الگ الگ مقدمات دائر کیے ہیں جو ان کے بقول چین کے لیے جاسوسی سرگرمیوں میں ملوث تھے۔

دونوں ممالک میں ہانگ کانگ اور سکیورٹی کے معاملات پر اختلافات میں اضافہ ہو رہا ہے۔