ٹرمپ کے مطابق، جیل کی سزا ان کے حامیوں کے لیے 'بریکنگ پوائنٹ' ہو سکتی ہے

سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے خبردار کیا ہے کہ اگر انہیں جعل سازی کیس میں گھر پر نظر بند کیا گیا یا جیل بھیجا گیا تو یہ ان کے حامیوں کے لیے ’اہم موڑ‘ ہو سکتا ہے۔

انہوں نے یہ بات اتوار کے روز فاکس نیوز کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہی، جب انہیں 2016 کے انتخابات سے قبل کاروباری ریکارڈ میں جعل سازی کے مقدمے میں جمعرات کے روز مجرم قرار دیا گیا۔

ٹرمپ پہلے سابق امریکی صدر بن گئے ہیں، جن پر کوئی جرم ثابت ہوا ہے۔

فاکس نیوز کے ایک اینکر نے پوچھا کہ اگر جج نے انہیں گھر میں نظربند یا جیل بھیج دیا تو وہ کیا ردعمل ظاہر کریں گے۔ ٹرمپ نے کہا، "مجھے اس میں کوئی مسئلہ نہیں"۔

لیکن انہوں نے مزید کہا، "مجھے یقین نہیں ہے کہ عوام اسے برداشت کریں گے"۔ انہوں نے یہ بھی کہا، "میرے خیال میں عوام کے لیے اسے قبول کرنا مشکل ہو گا۔ آپ جانتے ہیں، کسی خاص موڑ پر، ایک بریکنگ پوائنٹ ہوتا ہے"۔

انہیں 11 جولائی کو سزا سنائی جائے گی۔ ٹرمپ، فیصلے کے خلاف اپیل کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ فاکس نیوز کا کہنا ہے کہ جیل کی سزا کا امکان نہیں ہے، کیونکہ وہ 77 سال کے ہیں اور یہ ان کا پہلا جرم ہے۔