اوپیک پلس کا تیل کی پیداوار میں کمی جاری رکھنے پر اتفاق

تیل پیدا کرنے والے بڑے ممالک کا ایک گروپ، جسے اوپیک پلس کہا جاتا ہے، نے پیداوار میں کمی کے اپنے موجودہ فریم ورک کو 2025 کے آخر تک مزید ایک سال بڑھانے پر اتفاق کیا ہے۔

تیل برآمد کرنے والے ممالک کی تنظیم اور روس سمیت تیل پیدا کرنے والے دوسرے بڑے ممالک نے اتوار کو ایک وزارتی اجلاس کا انعقاد کیا۔

اجلاس کے بعد جاری کردہ ایک بیان میں، گروپ نے کہا کہ اس نے موجودہ کٹوتیوں کو طول دینے پر اتفاق کیا ہے جو اس سال کے آخر میں ختم ہونے والی تھیں۔ اس کا مطلب ہے کہ یومیہ 36 لاکھ 60 ہزار بیرل کی کمی 2025 تک جاری رہے گی۔

سعودی عرب اور عراق سمیت آٹھ ارکان بھی 22 لاکھ بیرل یومیہ کی رضاکارانہ کمی کو مزید تین ماہ ستمبر کے آخر تک بڑھا دیں گے۔

ان کا کہنا ہے کہ وہ خام تیل کی مارکیٹ میں رجحانات پر نظر رکھتے ہوئے کمی کو اکتوبر سے مرحلہ وار ختم کر دیں گے۔

اسرائیل اور ایران کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی کی وجہ سے مشرق وسطیٰ میں حالات مزید کشیدہ ہونے کے خدشات کے باعث اپریل میں خام تیل کے مستقبل کے سودوں کی قیمت میں اضافہ ہوا تھا۔ لیکن اب یہ قیمتیں اس سے کم سطح پر ہیں۔

اوپیک پلس بظاہر چینی معیشت کے امکانات کی بڑھتی ہوئی غیر یقینی صورتحال اور دیگر عوامل کی روشنی میں پیداوار میں کمی کو جاری رکھ کر تیل کی قیمتوں کو بڑھانے کی کوشش کر رہا ہے۔