جاپان، امریکہ، جنوبی کوریا کے دفاعی سربراہان کا سلامتی تعاون پر تبادلۂ خیال

جاپان، امریکہ اور جنوبی کوریا کے دفاعی سربراہان نے مشترکہ علاقائی سلامتی کے خدشات اور اس علاقے میں سہ فریقی تعاون کا نفاذ کرنے کے اقدامات پر تبادلۂ خیال کیا ہے۔

جاپان کے وزیرِ دفاع کِیہارا منورُو، امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن اور جنوبی کوریا کے وزیر دفاع شِن وون سِک نے اتوار کے روز سنگاپور میں تقریباً ایک گھنٹے تک بات چیت کی۔

تینوں رہنماؤں نے مذاکرات کے بعد مشترکہ بیان جاری کیا۔

انہوں نے 27 مئی کو شمالی کوریا کی جانب سے عسکری مصنوعی سیارہ خلا میں روانہ کرنے کی کوشش پر تشویش کا اظہار کیا اور پیانگ یانگ پر زور دیا کہ وہ مزید تخریبی سرگرمیاں فوراً روک دے۔

دفاعی رہنماؤں نے رواں موسمِ گرما میں بّری، بحری اور فضائی افواج سمیت متعدد شعبوں میں نئی سہ فریقی مشقیں کر کے تعاون بڑھانے کا فیصلہ کیا۔

انہوں نے علاقائی سلامتی کے مسائل کا حل تلاش کرنے کے طریقوں پر تبادلۂ خیال کے لیے مفروضہ ہنگامی صورتحال اور عملی اقدامات پر تبادلۂ خیال کی غرض سے سہ فریقی ٹیبل ٹاپ مشق کرنے کا بھی فیصلہ کیا۔

انہوں نے ہند۔بحرالکاہل خطے میں امن و استحکام میں کردار ادا کرنے کے لیے معلومات کے تبادلے اور سہ فریقی مشقوں سمیت سہ فریقی سلامتی تعاون کو ادارہ جاتی شکل دینے پر اتفاق کیا۔

تینوں عہدیداروں نے تصدیقِ نو کی کہ وہ چین کی بڑھتی ہوئی بحری سرگرمیوں کے پیشِ نظر "ہند۔بحرالکاہل کے پانیوں میں صورتحال کو تبدیل کرنے کی کسی بھی یکطرفہ کوشش کی سختی سے مخالفت کرتے ہیں"۔

انہوں نے آبنائے تائیوان کے آر پار امن و استحکام کی اہمیت پر اتفاق کیا اور آبنائے کے آر پار مسائل کے پُرامن حل پر زور دیا۔