بائیڈن کی یوکرین کو امریکی ہتھیاروں سے روس کے کچھ علاقوں پر حملہ کرنے کی اجازت: امریکی میڈیا

امریکی ذرائع ابلاغ کے بڑے اداروں کا کہنا ہے کہ صدر جو بائیڈن نے یوکرین کو اس بات کی اجازت دے دی ہے کہ امریکی فراہم کردہ ہتھیاروں سے روس کے اندر کچھ محدود علاقوں پر حملہ کیا جا سکتا ہے۔ یہ امریکی پالیسی میں واضح تبدیلی ہے۔

اس سے قبل بائیڈن انتظامیہ کی جانب سے کِیف کو صرف یوکرین کی حدود میں روس کے خلاف امریکی فراہم کردہ ہتھیار استعمال کرنے کی اجازت تھی۔

سیاسی خبروں کی ویب سائٹ پولیٹیکو اور دیگر میڈیا اداروں نے امریکی حکومتی ذرائع کے حوالے سے جمعرات کو یہ خبر دی۔

انہوں نے ایک اہلکار کے حوالے سے بتایا کہ صدر نے حال ہی میں اپنی ٹیم کو ہدایت کی ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائے کہ یوکرین خارکِیف میں جوابی فائرنگ کے مقاصد کے لیے امریکی ہتھیار استعمال کر سکے، تاکہ حملہ آور ہونے والی یا حملے کی تیاری کرنے والی روسی افواج کے خلاف یوکرین جوابی کارروائی کر سکے۔

رپورٹس کے مطابق بائیڈن کے فیصلے کا اطلاق صرف مشرقی یوکرین کے علاقے خارکیف کے قریب سرحد پار اہداف پر ہو گا۔ بتایا گیا ہے کہ یوکرین اب خارکیف کی طرف بڑھنے والے روسی میزائلوں، خارکیف کے قریب سرحد پر جمع ہونے والی روسی افواج یا یوکرین کی سرزمین کو نشانہ بنانے والے روسی بمبار طیاروں کو نشانہ بنانے کے لیے راکٹ اور راکٹ لانچرز جیسے وہ ہتھیار استعمال کرسکے گا جو امریکہ کے فراہم کردہ ہیں۔

اطلاعات کے مطابق امریکی انتظامیہ یوکرین کو روس کے اندر دور تک حملہ کرنے کے لیے طویل فاصلے تک مار کرنے والے میزائل استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے رہی۔