میانمار کی فوج نے 2021 سے اب تک 5000 افراد کو ہلاک کیا: انسانی حقوق گروپ

میانمار میں انسانی حقوق کے ایک گروپ کا کہنا ہے کہ تین سال قبل بغاوت کے ذریعے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے ملکی فوج کے حملوں اور کریک ڈاؤن میں 5000 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

سیاسی قیدیوں کے لیے امدادی ایسوسی ایشن AAPP نے جمعے تک جمہوریت کے حامی کارکنوں اور عام شہریوں سمیت، ہلاک شدگان کے اپنے اعداد و شمار کا حوالہ دیا۔

اس کا کہنا ہے کہ بہت سے لوگ شمال مغربی علاقے ساگائنگ اور ملک کے دوسرے بڑے شہر منڈالے میں مارے گئے جہاں فوج اور جمہوریت کی حامی قوتوں کے درمیان لڑائی جاری ہے۔

فوج، یکم فروری 2021 کو بغاوت کے بعد سے ملک کے اقتدار پر قابض ہے، اور اس نے جمہوریت نواز قوتوں کے ارکان کو حراست میں لینا جاری رکھا ہوا ہے۔