جارجیا میں غیرملکی اثر و رسوخ کے مسودۂ قانون کے خلاف مظاہرہ

جارجیا کے دارالحکومت تبلیسی میں لوگوں کے ایک بڑے ہجوم نے ایک مسودۂ قانون کے خلاف احتجاج کیا، جس کے بارے میں اُن کا کہنا ہے کہ اس کا مقصد غیرملکی فنڈنگ ​​حاصل کرنے والی تنظیموں کو کنٹرول کرنا ہے۔

یہ مسودۂ قانون حکمران جماعت نے پیش کیا تھا۔ اس کی منظوری کی صورت میں، اپنی 20 فیصد سے زیادہ فنڈنگ بیرونِ ملک سے وصول کرنے والی غیر سرکاری تنظیموں اور ذرائع ابلاغ کیلئے لازمی ہو گا کہ وہ خود کو غیرملکی ادارے کے ایجنٹوں کے طور پر رجسٹر کروائیں۔

مظاہرین کا کہنا ہے کہ یہ مسودۂ قانون، روسی قانون سے ملتا جُلتا ہے جسے حکومت اُن تنظیموں اور ذرائع ابلاغ کی سرگرمیوں کو محدود کرنے کے لیے استعمال کرتی ہے جو حکومت کو ناموافق لگیں۔

چونکہ اس مسودۂ قانون پر جلد رائے دہی کی توقع ہے، ہزاروں افراد نے وسطی تبلیسی کے ایک چوک میں ہفتے کے روز احتجاجی ریلی نکالی۔

شرکاء کا کہنا تھا کہ آزاد اور جمہوری جارجیا کو اس قسم کے مسودۂ قانون کی ضرورت نہیں ہے۔

ریلی میں شریک ایک شخص کا کہنا تھا کہ یہ دراصل ایک روسی قانون ہے جو جارجیا کی یورپی یونین میں شمولیت کی خواہش میں رکاوٹ بنے گا۔ اُنہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ احتجاجی مظاہروں سے مسودۂ قانون کو مسترد کروانے میں مدد ملے گی۔

جارجیا نے یورپی یونین میں شامل ہونے کے لیے درخواست دے دی ہے، لیکن بتایا جاتا ہے کہ حکمراں جماعت کے بانی روس کے قریب ہیں۔