وزیرِ اعظم کِشیدا کا اغوا کے مسئلے کیلیے کم جونگ اُن کے ساتھ کام کرنے کا عہد

جاپانی وزیرِ اعظم کِشیدا فُومیو نے شمالی کوریا کے رہنما کِم جونگ اُن کے ساتھ سربراہ ملاقات کے لیے کوششیں تیز کرنے کا عہد کیا ہے تاکہ شمالی کوریا کے ہاتھوں اغوا کیے گئے تمام جاپانی شہریوں کو واپس لایا جا سکے۔

متاثرین کے اہلِ خانہ کی ٹوکیو میں ہفتے کے روز منعقد کردہ ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے، جناب کِشیدا نے کہا کہ اغوا کا مسئلہ فوری انسانی مسئلہ ہے اور بہت سے اہلِ خانہ کے عمر رسیدہ ہو جانے کے باعث اب بہت کم وقت بچا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت متاثرین کو جلد از جلد وطن واپس لانے کی ہر ممکن کوشش کرے گی۔

جناب کِشیدا نے صورتحال میں زبردست تبدیلی لانے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اعلیٰ رہنماؤں کے لیے ایسے تعلق کو قائم کرنا ضروری ہے جو انہیں مشکل مسائل سے نمٹنے کے لیے کھل کر بات کرنے کے قابل بنائے۔

انہوں نے کہا کہ وہ کسی بھی وقت بغیر کسی شرط کے کِم سے ملاقات کے لیے پُرعزم ہیں۔

وزیرِ اعظم نے یہ بھی کہا کہ وہ اپنی براہ راست کمان کے تحت اعلیٰ سطحی مذاکرات کو آگے بڑھانے کے لیے مختلف ذرائع کے توسط سے کوششیں تیز کریں گے تاکہ سربراہی اجلاس کے انعقاد کو ممکن بنایا جا سکے۔

انہوں نے مزید کہا کہ وہ شمالی کوریا کے رہنما پر زور دینا چاہتے ہیں کہ وہ پوری صورتحال کو دیکھیں، رکاوٹیں دور کریں اور مل کر فیصلے کریں۔