جنوبی کوریائی صدر کی توجہ جاپان کے ساتھ دوطرفہ تعلقات کو فروغ دینے پر مرکوز

جمعرات کو جنوبی کوریا کے صدر ین سوں نئیول نے جاپان کے ساتھ بہتر تعلقات کو فروغ دینا جاری رکھنے کے اپنے ارادے پر زور دیا ہے۔

جناب ین نے دو طرفہ تعلقات کا حوالہ اپنے عہدہ صدارت کے دو سال مکمل ہونے سے ایک دن قبل منعقدہ نیوز کانفرنس میں دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کو برداشت طلب امور کو برداشت کرنا چاہئے اور درست سمت میں آگے بڑھنا چاہئے اس کے ساتھ ساتھ یہ تسلیم کرنا چاہئے کہ مختلف زیر التوا معاملات اور تاریخ رکاوٹیں پیدا کر سکتے ہیں۔

جناب یُن نے کہا کہ وہ اور جاپانی وزیر اعظم کشیدا فومیو باہمی اعتماد کا احساس اور دوطرفہ تعلقات کو بہتر بنانے کی خواہش رکھتے ہیں۔

جنوبی کوریا میں گزشتہ ماہ ہونے والے عام انتخابات میں حزب اختلاف نے اپنی اکثریت برقرار رکھی ہے۔ کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ اس سے ایوان میں جاپان کے بارے میں ملکی پالیسی پر نظر ثانی کا مطالبہ زور پکڑ سکتا ہے۔

ین نے یہ بھی کہا کہ جنوبی کوریا کی کم شرح پیدائش کو قومی ایمرجنسی متصور کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے اس مسئلے سے نمٹنے کے لئے ایک نئی وزارت تشکیل دینے کے منصوبے کا اعلان کیا۔

اگست 2022 میں اپنے عہدے کے پہلے سو دن مکمل کرنے کے بعد یہ جناب ین کی پہلی صدارتی نیوز کانفرنس تھی۔

بعض مبصرین نے گزشتہ ماہ حکمراں جماعت کی بری شکست کی وجہ جناب یُن کی من مانی طرز حکمرانی کو قرار دیا ہے۔

جناب یُن نے ممکنہ طور پر جمعرات کی نیوز کانفرنس کو اپنی حکومت کے منصوبوں کو وسیع عوامی حلقے کے سامنے پیش کرنے کے موقع کے طور پر استعمال کیا ہے۔