چِپ پروڈکشن کے لیے اِنٹیل، جاپانی کمپنیوں میں شراکت

بڑی امریکی چِپ ساز کمپنی اِنٹیل نے سیمی کنڈکٹر کی پیداوار کو خودکار اور معیاری بنانے کے لیے نئے طریقے وضع کرنے کی غرض سے 14 جاپانی کمپنیوں کے ساتھ شراکت قائم کی ہے۔

ان کمپنیوں کے مطابق، اس منصوبے کے لیے اولین قدم اٹھاتے ہوئے اپریل میں ٹوکیو میں ایک گروپ قائم کیا گیا، جسے سیمی کنڈکٹر اسمبلی ٹیسٹ آٹومیشن اینڈ اسٹینڈرڈائزیشن ریسرچ ایسوسی ایشن، یا مختصراً SATAS کہا جاتا ہے۔

گروپ کے جاپانی ارکان میں اومرون، ریسونیک ہولڈنگز اور شِن اِتُسو پولیمر شامل ہیں۔

اس گروپ کے قیام کا مقصد چِپس کی خودکار پیکجنگ، اسمبلی اور جانچ، یا بیک اینڈ پراسیس کے نام سے موسوم طریقۂ عمل ہے۔ یہ کمپنیاں 2028 تک مذکورہ سسٹم کا آغاز اور پیداواری عمل شروع کرنا چاہتی ہیں۔

بیک اینڈ پراسیس کو سنبھالنے کے لیے زیادہ لیبر کی ضرورت ہوتی ہے اور ایسے کئی کارخانے چین اور جنوب مشرقی ایشیا میں قائم ہیں۔ اس کے باعث جاپان کو لیبر کے زیادہ اخراجات کے ساتھ ساتھ اس شعبے میں تکنیکی ماہرین کی کمی کی وجہ سے نقصان پہنچا ہے۔

SATAS گروپ کا کہنا ہے کہ اس کے بیک اینڈ پراسیسز کی آٹومیشن سے پیداواری کارکردگی بہتر ہو گی، نئے معیار قائم ہوں گے اور اراکین کی عالمی مسابقت کو فروغ ملے گا۔