پابندیوں کی نگرانی کے نئے طریقہ کار کے منصوبے پر شمالی کوریا کی تنقید

شمالی کوریا نے امریکہ، جاپان اور دیگر ممالک کی جانب سے شمالی کوریا پر پابندیوں کی نگرانی کے لیے ایک نیا طریقۂ کار وضع کرنے کے مشترکہ عزم کی مذمت کی ہے۔

اقوام متحدہ میں شمالی کوریا کے سفیر کِم سونگ نے اتوار کے روز سرکاری کورین سینٹرل نیوز ایجنسی کے ذریعے یہ تنقید کی ہے۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ماہرین کے ایک پینل نے 15 سال تک شمالی کوریا پر پابندیوں کے نفاذ کی نگرانی کی ہے۔

لیکن روس کی جانب سے اس کی تجدید کی قرارداد کو ویٹو کرنے کے بعد یہ مینڈیٹ 30 اپریل کو ختم ہو گیا۔

اس کے بعد اگلے روز 49 ممالک اور یورپی یونین کو ایک مشترکہ بیان جاری کرنا پڑا جس میں اقوام متحدہ کے پینل کی جگہ ایک نیا طریقہ کار بنانے پر زور دیا گیا۔

کِم سونگ نے کہا کہ امریکہ اور دیگر مغربی ممالک کو اس کی ناکامی پر گہرائی سے غور کرنا چاہیئے جس کو انہوں نے شمالی کوریا کے خلاف ان ممالک کی معاندانہ پالیسی کہا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر امریکہ اور "اس کے پیروکار دشمنی پر مبنی پالیسی پر مسلسل گامزن رہے" تو انہیں "مزید افسوسناک تزویراتی شکست" کا سامنا کرنا پڑے گا۔