جاپان میں غیرملکی طلباء کے رہائشی قوانین سخت

حکومتِ جاپان نے وزارتِ انصاف کے آرڈیننس پر نظرِثانی کی ہے تاکہ طلباء کو رہائشی حیثیت کا درجہ دینے کے قوانین کو سخت کیا جا سکے۔ یہ اقدام 2019ء کے اس انکشاف کے بعد سامنے آیا کہ ٹوکیو کی ایک یونیورسٹی کا اپنے 16 سو سے زیادہ غیرملکی طلباء سے رابطہ منقطع ہو گیا تھا۔

اپریل میں نظرثانی شدہ نئے قوانین کے تحت، تعلیمی اداروں میں بین الاقوامی طلباء کو قبول کرنے کے اندراج کا موزوں انتظام ہونا ضروری ہے۔ مطلوبہ اقدامات میں طلباء کی حاضری اور جز وقتی ملازمت کے ریکارڈ پر صحیح طریقے سے نظر رکھنا شامل ہے۔

اگر کوئی اسکول ان تقاضوں کو پورا کرنے میں ناکام رہتا ہے تو، اُن میں داخل غیرملکیوں کو طالب علم کی رہائشی حیثیت اس وقت تک نہیں دی جائے گی جب تک ان حالات میں بہتری نہیں لائی جاتی۔

جو لوگ جاپانی زبان سیکھنے کا ارادہ رکھتے ہیں انہیں حکومت سے تصدیق شدہ لینگویج اسکول میں داخلہ لینا ہو گا۔ طالب علم کا رہائشی درجہ ان لوگوں کے لیے جاری نہیں کیا جائے گا جو تحقیقی طالب علم یا آڈٹ کرنے والے طالب علم کے طور پر زبان سیکھتے ہیں۔