ASEAN+3 کا ہنگامی حالات کے لیے نیا فنڈنگ ​​لائحہ عمل

جاپان، چین، جنوبی کوریا اور جنوب مشرقی ایشیائی ممالک کی تنظیم آسیان کے وزرائے خزانہ اور مرکزی بینک کے گورنروں نے قدرتی آفات یا عالمی وباؤں جیسے ہنگامی حالات میں ایک دوسرے کو فنڈز فراہم کرنے کے لیے نیا لائحہ عمل تشکیل دینے پر اتفاق کیا ہے۔

جاپانی وزیر خزانہ سوزوکی شُن اِچی اور بینک آف جاپان کے ڈپٹی گورنر ہِمینو ریوزو سمیت شرکاء نے جمعے کو جارجیا کے شہر تِبلیسی میں ملاقات کی۔

مندوبین نے اتفاق کیا کہ نیا لائحہ عمل چیانگ مائی منصوبے کے تحت قائم کیا جائے گا جسے 1997 کے ایشیائی مالیاتی بحران کے بعد بنایا گیا تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ 2025 تک تفصیلات مکمل کر لی جائیں گی۔

اجلاس کے بعد جاری ہونے والے مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ غیر ملکی زرمبادلہ کی منڈی میں اتار چڑھاؤ میں اضافہ جیسے خطرات، قلیل مدت میں تینوں ممالک اور آسیان کے ارکان کے اقتصادی مستقبل کو متاثر کر سکتا ہے۔

جمعہ ہی کو، جاپان اور بحرالکاہل کے جزیرے کے ممالک کے وزرائے خزانہ نے بھی ملاقات کی اور موسمیاتی تبدیلی اور بنیادی ڈھانچے کی سرمایہ کاری پر تبادلہ خیال کیا۔

انہوں نے اقتصادی اور مالیاتی شعبوں میں تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے قریبی رابطے برقرار رکھنے پر اتفاق کیا۔