چاند کی دوسری سمت تحقیق کے لیے چین کا خلائی جہاز روانہ

چینی خلائی ایجنسی کے حکام کا کہنا ہے کہ انہوں نے چاند کی دوسری سمت سے نمونے اکٹھے کرنے کے لیے غیر انسان بردار تحقیقی خلائی جہاز کامیابی سے روانہ کر دیا ہے۔

یہ اعلان جمعہ کو جنوبی جزیرے ہینان کے ایک مقام سے Chang'e-6 کے لانچ ہونے کے فوراً بعد کیا گیا۔

خلائی جہاز چٹانی پتھر اور دیگر نمونے لانے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

کامیاب ہونے کی صورت میں یہ مشن اپنی نوعیت کا پہلا مشن ہو گا۔ لیکن ماہرین کا کہنا ہے کہ اہم چیلنجز درپیش ہیں۔

چاند کی تحقیق کے خلائی جہاز کے ساتھ مسلسل براہ راست رابطہ ناممکن ہے کیونکہ زمین سے ریڈیو لہریں چاند کی عقبی سمت تک نہیں پہنچ پاتیں۔

چینی حکام کا کہنا ہے کہ وہ تقریباً دو کلو گرام نمونے جمع کرنے اور لانچ کے 53 دن بعد تحقیقی خلائی جہاز کو زمین پر واپس لانے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

خلائی تحقیق میں مسابقت تیزی سے بڑھ رہی ہے اور برسوں امریکی زیر قیادت رہنے والے اس شعبہ میں مزید ممالک شامل ہو رہے ہیں۔