چین کی بڑھتی مسابقت، ٹیسلا کی سیلز میں کمی

چین میں قائم برقی گاڑیاں بنانے والی کمپنیوں کی بڑھتی ہوئی مسابقت اور مانگ میں کمی کی وجہ سے ٹیسلا کی سہ ماہی آمدنی تقریباً چار سالوں میں پہلی بار کم ہو گئی ہے۔

امریکہ میں قائم اس بڑی ای وی کمپنی نے منگل کو کہا کہ مارچ میں ختم ہونے والی سہ ماہی میں سال بہ سال کے اعتبار سے فروخت 9 فیصد کم ہوکر تقریباً 21 ارب 30 کروڑ ڈالر رہی۔

خالص آمدنی 55 فیصد کم ہو کر تقریباً ایک ارب دس کروڑ ڈالر رہ گئی۔ یہ مارچ 2021 میں ختم ہونے والی سہ ماہی کے بعد خالص آمدنی کے لحاظ سے بدترین سہ ماہی ہے۔

آپریٹنگ مارجن پانچ اعشاریہ پانچ فیصد تک گر گیا، جس کی جزوی وجہ مسابقت کو پورا کرنے کے لیے کپمنی کی جانب سے قیمتوں میں کمی ہے۔ یہ ایک سال قبل کی اسی مدت کے لئے ظاہر کردہ گیارہ اعشاریہ چار فیصد شرح کے نصف سے بھی کم ہے۔

ٹیسلا حکام کا یہ بھی کہنا ہے کہ انہوں نے کار ساز کمپنی کی عالمی افرادی قوت میں 10 فیصدد کمی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔